11

ہماری نوجوان نسل (شاہین احمد)

نوجوان طبقہ بلا شبہ امت کا ایک قیمتی سرمایہ ہوتا ہے ، اور جب اسے خیر و بھلائی کے کاموں ، عزت و عظمت کے تحفظ اور تعمیر و ترقی کے امور میں صرف کیا جائے تو پھر یہ طبقہ ایک نعمت اورخیروبرکت بن جاتا ھے اور اگر اسے شرو فساد اپنے رنگ میں رنگ لے تو یہی طبقہ خطرناک اور انتہائی نقصاندہ بن کر سامنے آتا ھے۔

شباب و جوانی میں اخلاق و کردار کا تنزل انتہائی خطرناک اور خوفناک ہوتا ھے لہذا جس قدر نوجوان طبقے کی تربیت اور ان کے مسائل میں دلچسپی لی جائے گی اسی قدر امت اور معاشرے کا انجام بہتر ھو گا۔

آج کل کا اہم ترین مسئلہ نوجوان نسل کا نظریاتی اور اخلاقی انحراف ہی ھے۔ اور وہ امور جو والدین اور تعلیم و تربیت سے متعلقہ لوگوں کے لئے پریشانی کا سبب ہیں ان میں سے یہ ایک اہم ترین موضوع ھے۔ لیکن اس معاملے میں اکثر ہم پر جذبات غالب آجاتے ہیں۔ کسی مسئلہ کو اسی طرح نرمی سے دیکھے چلے جاتے ہیں اور بلآخر وہ زخم بہت بڑا ھو کر پھٹ جاتا ھے جس کے بہت خطرناک نتائج سامنے آنا شروع ہو جاتے ہیں۔

چنانچہ اس بات کی شدید ضرورت ہے کہ گہری فکر و نظر سے کام لیا جائے اور اس مسئلے کا تجزیہ کرتے ھوئے ، اس کے اسباب ومستقبل پر غور کیا جائے اور دین و شریعت کی بنیادوں پر پورے منظم انداز سے اس مسئلہ کی روک تھام اور بچاؤ کی تدابیر اختیار کی جائیں۔ کیونکہ نوجوان نسل ہی تو امت کی امید ،مستقبل کا سہارا ، معاشرے کا سرمایہ اور امتوں کی زندگی کی ریڑھ کی ہڈی ھوتی ھے۔

یہ امت مسلمہ جسے اللہ تعالی نے تمام امتوں سے بہترین امت قرار دیا ھے یہ ہر گز نہیں چاہتی کہ اس کا نوجوان طبقہ محض عام سے لوگوں پر مشتمل ھو بلکہ وہ یہ چاہتی ھے کہ اس کی نوجوان نسل زمین کے سردار اور اخلاقی میدان کے قائدین ھوں۔ اسلام کا نور پھیلنے سے لیکر آج تک ہماری امت کی تاریخ میں اس امت کی نوجوان نسل نے بڑے بڑے کارنامے اور اعلی نمونے رقم کیے ہیں لیکن وہ نسل جو صحیح طور پر ایمان لائی ، عمدہ و اعلی اعمال صالحہ سرانجام دئے اور انھوں نے اللہ تعالی کی نازل کردہ شریعت کو اپنایا۔ ان نوجوانوں نے اپنی قوم کو اپنے اقوال و افعال سے سعادت بخشی اور اپنے عمدہ اخلاق و اعلی کردار و عمل سے معاشرے کی خیر و بھلائی میں نمایاں کردار ادا کیا۔

ہمارے موجودہ دور میں شکوک و شہبات کے راستے بہت زیادہ ھو گئے ہیں اور خواہشات نفس کی تسکین کا سامان بہت عام ھوگیا ھے اور ہماری نوجوان نسل ان زہریلے تیروں کا نشانہ بنی ھوئی ھے۔ جبکہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم ان گندگیوں سے کوسوں دور تھے۔ کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ و سلم نے ان کے تحفظ کا مکمل اہتمام و انتظام فرمایا۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم قدم قدم پر، موقع بہ موقع صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم کی اصلاح کی فکر فرماتے، اْن کی کوتاہیوں پرمتنبہ فرماتے اور قابلِ تعریف امور پر حوصلہ افزائی فرماتے۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے بھی بیدار مغزی سے کام لیا اور تمام خوفناک فتنوں کے راستے بند کر دئے اور اس راستے میں آنے والی رکاوٹوں کا کا ڈٹ کر مقابلہ کیا۔

نوجوان نسل کی تربیت و تیاری اور اس کی شخصیت کو تعمیر کرنے کا پہلا اور بنیادی مرحلہ اس کا خاندان ھوتا ھے اور اسی سے بچے کی بھلائی و برائی اور اصلاح و بگاڑ کی راہ متعین ھوتی ھے۔ اگر والدین خصوصاً باپ اپنے خاندانوں یا گھرانوں کی تربیت سے اپنی توجہ ہٹا لے اور صرف اسے ہی اپنا فرض خیال کرے کہ اْسے اپنی اولاد کیلئے مال و دولت کا ذخیرہ مہیا کرنا ھے۔ جوان اولاد کو اْن کے حال پر چھوڑ دیا جائے، ان کی تربیت میں کوتاہی برتی جائے اور ان کی راہنمائی و ہدایت کیلئے کوئی وقت ہی نہ دیا جائے تو ایسے خاندان کو اپنی ذمہ داریوں سے غافل تصور کیا جائے گا۔

آج اگر دیکھا جائے تو بکثرت باپ ایسے ہیں کہ اپنے بچوں کے ساتھ اپنا تعلق اور ذمہ داری صرف مالی حساب کتاب سے زیادہ نہیں سمجھتے کہ بچوں کے کھانے پینے ، پہننے اور سیروتقریح کیلئے وافر اخراجات مہیا کر دینا ہی ان کا فریضہ ھے۔ جہاں تک ان کی اخلاقی تربیت ،کردار و مذہبی اصلاح اور ان کی شخصت کی تعمیر کا معاملہ ھے تو یہ امور ان کی ذمہ داریوں میں برائے نام ہی آتے ہیں۔

اللہ تعالی کا ارشاد گرامی ھے ’’ اے ایمان والو ! اپنے آپ کو اور اپنے اہل خانہ کو جہنم کی آگ سے بچاؤ‘‘۔ اور نبی صلی اللہ علیہ و سلم نے بھی ارشاد فرمایا ھے۔ ’’ (تم میں سے ) مرد اپنے گھر والوں کا نگران ھے اور وہ اپنی زیردست رعایا کے بارے میں جوابدہ ھے اور عورت اپنے شوہر کے گھر کی نگران ھے اور وہ اپنی زیردست رعایا (بچوں ) کے بارے میں جوابدہ ھے۔‘‘ (صحیح بخاری)

چنانچہ دیکھا جائے تو حقیقت میں نوجوان نسل میں اگر دینی انحطاط اور اخلاقی گراوٹ آجائے تو اس کے زیادہ تر ذمہ دار ان کے والدین ہی ھوتے ہیں۔۔ کیونکہ ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ و سلم ھے۔ ’’ ہر بچہ فطرت (اسلام ) پر پیدا ھوتا ھے۔ پھر اسے اس کے ماں باپ یہودی ، نصرانی (عیسائی ) یا مجوسی بنا دیتے ہیں‘‘ ( صحیح بخاری )

جب خاندان اور گھر کا ماحول تربیت کے لئے سازگار نہ رہے تو کیا اب یہ ممکن نہیںکہ انہیں براماحول اور برے ساتھیوں کی رفاقت مل جائے جو اْسے آسانی کے ساتھ اْن راستوں پر لے جائے جن پر چل کر وہ مجرم بن جائے۔ کیوں نہیں ؟ اگر اس کے ماں باپ نے اس کی صحیح نگرانی ، خیرخواہی ، اور راہنمائی نہیں کی اور اسے ہدایت و نور کاراستہ بتانے والا ہی کوئی نہیں تو پھر اس کا راہ حق سے منحرف ھو جانا اور مجرم بن جانا کوئی انہونی بات تو نہیں ھے۔

گھر کے بعد مدرسہ وہ ادارہ ہے جس کا کردار نوجوان نسل کی تربیت میں بہت ہی مؤثر و گہرا ہے۔ اس سے کوئی صاحب عقل و دانش انکار نہیں کر سکتا کہ نوجوان نسل کی عمر کا یہ مرحلہ اس بات کا مطالبہ کرتا ہے کہ انھیں بھرپور شرعی نصاب سے مزین کیا جائے خصوصا جبکہ آجکل دنیا کے اطراف سمٹ کر اسے ایک چھوٹے سے گاؤں کی شکل میں لے آئے ہیں اور اس گلوبلائزیشن کے ساتھ ساتھ ہی گمراہ کن افکار بھی بہت پھیلے ھوئے ہیں۔ ہر طرف شہوت پرستی کا ننگا ناچ ہے اور اخلاق کو تباہ کرنے والے اسباب کی بھرمار ہے۔ ایسے میں بھر پور شرعی نصاب سے نوجوان نسل کے دلوں کا تحفط کیا جانا ضروری ہے اور ان کے افکار کو گمراہ کن عقائد اور تباہ کن فسق و فجور سے بچایا جائے۔

دین اسلام کی تعلیمات نوجوان نسل کو بے راہ روی سے بچانے کی سب سے بڑی ضمانت ہیں اور تاریخ خود بیشمار واقعات اور عبرتوں کو اپنے اندر سموئے ھوئے ہے۔ اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا ہے ’’ یہ قرآن وہ راستہ دکھلاتا ہے جو سب سے سیدھا ہے ‘‘۔ ( بنی اسرائیل۔۹ )۔ جب دینی تعلیمات کا فقدان ہو جائے گاتو نوجوان نسل انحراف و بے راہ روی کا شکار ہو جاتی ہے اور یہ بھی ممکن ہے کہ نوجوان نسل کے افراد جرائم پیشہ ، مغرب کے رسیا اور دشمنان دین کی گود میں سکون محسوس کرنے والے بن جائیں یا گمراہ کن افکار و نظریات کا شکار بن جائیں۔ وہ اپنا بھی مستقبل برباد کریں اور امت کا بھی ، اپنے آپ کو بھی برباد کر لیں اور امت کو بھی لے ڈوبیں۔

اخلاق و کردار کی اصلاح میں نیک ماحول اور اچھے دوستوں کی صحبت کا بھی بڑا دخل ہے۔ حضرت ابوھریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ و سلم نے ارشاد فرمایا’’ انسان اپنے دوست کے دین پر ھوتا ہے ، لھذا اسے چاہیے کہ دیکھ بھال کر کسی کو اپنا دوست بنائے ‘‘۔ (مسند احمد)۔ برے ساتھیوں کی صحبت آدمی کو تباہی و بربادی کی طرف گھسیٹ لے جاتی ہے اور اسے ھلاکتوں سے ھمکنار کر سکتی ہے۔ اور نیک صحبت عمدہ اخلاق اور کردار کی اصلاح و تعمیر کاایک ذریعہ ہے۔

آج کل صحبت کی ایک جدید اور خطرناک ترین صورت میڈیا کی شکل میں بھی موجود ہے۔ آج کا دور شہوتوں کو بھڑکانے والا ، عریانی و فحاشی کو پھیلانے والا دور ھے جو نسل نو کے جذبات کو غلط رخ دینے کے لئے طرح طرح کے حربے آزماتا رہتا ہے۔ اور اس سلسلے کا ایک سب سے بڑا جال یہ سیٹلائٹ چینلز ہیں جن میں سے اکثر کا کام ہی یہ ھوگیا ھے کہ وہ بدکرداری و بے راہ روی کو نہایت بنا سنوار کر پیش کر رہے ہیں اور لوگوں کو بدراہ کرنے پر تلے ھوئے ہیں۔ یہ چینلز اپنی تمام تر قوتوں اور وسائل کے ذریعے عقلوں کو بگاڑنے ، دلوں میں فساد پیدا کرنے ، آنکھوں سے حیاء کا پردہ ہٹانے اور دینی اقدار کو ختم کرنے کیلئے تمام تر کوششیں کر رہے ہیں اور شر کے دروازے کھولے بیٹھے ہیں۔ یہ ذرائع ابلاغ بھی مسلمانوں کے خلاف کفار کی ایک منظم سازش ہے۔ وہ ان ممالک کا اخلاق و کلچر نقل کرتے چلے آرہے ہیں جن کا دین اسلام سے دور کا بھی کوئی واسطہ نہیں ھے اور ان ذرائع نے لوگوں کو فسق و فجور کا ارتکاب کرنے پر دلیر کر دیا ھے۔

اگر ہم اپنی نسلوں کی حفاظت چاہتے ہیں اور اپنے مستقبل کو روشن دیکھنا چاہتے ہیں تو ہم میں سے ہر ایک کو چاہیے کہ وہ اپنے اپنے دائرہ استطاعت میں نوجوان نسل کی تربیت میں اپنا کردار ادا کرے۔ والدین ہوں یا رشتہ دار، اساتذہ ہوں یا دوست احباب، مدرسین ہوں یا مبلغین ، اہل فکر ہوں یا اہل قلم ہر مسلمان کو چاہیے کہ اس کے سلسلے میں اپنی ذمہ داری کا حق ادا کرے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں